Ask Ghamidi

A Community Driven Discussion Portal
To Ask, Answer, Share And Learn

Forums Forums Epistemology and Philosophy آپ ﷺ سے المورد تک

  • آپ ﷺ سے المورد تک

    Posted by Arsalan on August 31, 2020 at 7:13 am

    اکثر اوقات میرے ذہن میں یہ سوال اٹھتاہے کہ دین کے وہ معملات جن میں المورد کا نکتہ نظر ایک امتیاز رکھتا ہے۔ اسے تاریخ میں ڈھونڈنا یا اس کی نظائر و اشارے دیکھنا اس قدر آسان نہیں۔ مثلاً عیسی ع کی وفات یہ عقیدہ دلیل کے حساب سے مستحکم ہے لیکن تاریخ میں اسے ڈھونڈنا مشکل ہے۔ اسی طرح نبی و رسول میں خاص فرق اور خدا کی رسالت کے لیے ایک خاص سنت وغیرہ

    کیا وجہ ہے کہ لوگوں ذہن اس فکر کی طرف مائل تو ہوتے ہے لیکن انھوں یہ فکر نئی اور اجنی محسوس ہوتی ہے۔

    وضاحت و اصلاح کا طلبگار

    $ohail T@hir replied 2 years, 3 months ago 5 Members · 7 Replies
  • 7 Replies
  • Umer

    Moderator August 31, 2020 at 1:59 pm

    This is a significant part of the same ibtila (test) of ilm-o-amal that we humans have been put through. Do we stick to our ancestral traditions just for the sake of ancestral association or revert back to the truth which we have conclusively found to be true (to the best of our knowledge and ability) after measuring it on the yardstick of arguments and logic.

  • Umer

    Moderator August 31, 2020 at 2:07 pm
  • Rafia Khawaja

    Member August 31, 2020 at 2:52 pm

    If we don’t keep searching for the truth then we will keep believing what our parents taught us, and what their parents taught them and remain in ignorance. Allah says use your “Aqal” to find the answers. We read the Qur’an without going into the depth of it or even understanding the meaning.

    • Arsalan

      Member August 31, 2020 at 2:55 pm

      I agree. Thank you

  • Faisal Haroon

    Moderator August 31, 2020 at 2:54 pm

    Please also watch the videos in this discussion:

    Discussion 17395

  • Arsalan

    Member August 31, 2020 at 2:54 pm

    عمر بھائی میں اس بات سے متفق ہو ایسا کیوں ہے کہ ہمیں تاریخ میں ان باتوں کے جو میں نے اوپر بیان کی ہے اس کی نظائر نہیں ملتے؟

    یہ تاریخی خلا کیوں آگیا ان عقائد میں؟

    • $ohail T@hir

      Moderator August 31, 2020 at 4:23 pm

      ذِكْرُ مَنْ قَالَ ذَلِكَ: حَدَّثَنِي الْمُثَنَّى، قَالَ: ثنا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ صَالِحٍ، قَالَ: ثني مُعَاوِيَةُ، عَنْ عَلِيٍّ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، قَوْلُهُ: {إِنِّي مُتَوَفِّيكَ} [آل عمران: 55] يَقُولُ: «إِنِّي مُمِيتُكَ»

      (تفسير جامع البيان في تفسير القرآن، الطبري ت 310 هـ)

You must be logged in to reply.
Login | Register