Ask Ghamidi

A Community Driven Discussion Portal
To Ask, Answer, Share And Learn

Forums Forums Sources of Islam Hadith Prohibiting Payment Of Interest (sood)

Tagged: , ,

  • Hadith Prohibiting Payment Of Interest (sood)

    Posted by Harun Malnas on February 11, 2024 at 8:12 am

    I was in Syria (having) a circle (of friends). in which was Muslim b. Yasir. There came Abu’l-Ash’ath. He (the narrator) said that they (the friends) called him: Abu’l-Ash’ath, Abu’l-Ash’ath, and he sat down. I said to him: Narrate to our brother the hadith of Ubada b. Samit. He said: Yes. We went out on an expedition, Mu’awiya being the leader of the people, and we gained a lot of spoils of war. And there was one silver utensil in what we took as spoils. Mu’awiya ordered a person to sell it for payment to the people (soldiers). The people made haste in getting that. The news of (this state of affairs) reached ‘Ubada b. Samit, and he stood up and said: I heard Allah’s Messenger (ﷺ) forbidding the sale of gold by gold, and silver by silver, and wheat by wheat, and barley by barley, and dates by dates, and salt by salt, except like for like and equal for equal.*So he who made an addition or who accepted an addition (committed the sin of taking) interest.* So the people returned what they had got. This reached Mu’awiya. and he stood up to deliver an address. He said: What is the matter with people that they narrate from the Messenger (ﷺ) such tradition which we did not hear though we saw him (the Holy Prophet) and lived in his company? Thereupon, Ubida b. Samit stood up and repeated that narration, and then said: We will definitely narrate what we heard from Allah’s Messenger (ﷺ) though it may be unpleasant to Mu’awiya (or he said: Even if it is against his will). I do not mind if I do not remain in his troop in the dark night. Hammad said this or something like this.

    Muslim:1587a


    Is riwayat ke mutabik to sood dena bhi gunah ka kaam hi huwa …. Iske bare me rehnumayi kare… Jazakallah

    Dr. Irfan Shahzad replied 2 weeks, 4 days ago 2 Members · 1 Reply
  • 1 Reply
  • Hadith Prohibiting Payment Of Interest (sood)

  • Dr. Irfan Shahzad

    Scholar February 11, 2024 at 11:10 pm

    سود صرف ادھار کے معاملے میں ہوتا ہے نقد کے نہیں ہوتا۔ بعض راویوں کو رسول اللہ ﷺ کی اس ہدایت سے غلط فہمی ہو گئی تھی کہ ہر جنس کا تبادلہ اسی جنس کرنا درست سوائے یہ کہ وہ قسم اور وزن میں برابر ہے۔ ظاہر ہے کہ ایسا تبادلہ کوئی نہیں کرتا کہ سونا یا کھجور دے کر اسی وزن اور اسی قسم کا سونا اور کھجور واپس لے لے۔

    حضرت معاویہ کا اعتراض بجا تھا مگر راوی کو جو سمجھ آئی تھی اس نے اس پر اصرار کیا۔

    غامدی صاحب اپنی کتاب میزان میں لکھتے ہیں:

    مبادلۂ اشیا کی صورت میں ادھار کے معاملات میں بھی نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اِس کی ہر آلایش سے بچنے کی ہدایت فرمائی ہے ۔ آپ کا ارشاد ہے :

    الذھب بالذھب وزنًا بوزن مثلاً بمثل، والفضۃ بالفضۃ وزنًا بوزن مثلاً بمثل، فمن زاد واستزاد فھو ربًا.(مسلم، رقم ۴۰۶۸)

    ’’تم سونا ادھار دو تو اُس کے بدلے میں وہی سونا لو ، اُسی وزن اور اُسی قسم میں، اور چاندی ادھار دوتو اُس کے بدلے میں وہی چاندی لو ، اُسی وزن اور اُسی قسم میں، اِس لیے کہ جس نے زیادہ دیا اور زیادہ چاہا تو یہی سود ہے۔‘‘

    الورق بالذھب ربًا إلا ھاء وھاء، والبر بالبر ربًا إلا ھاء وھاء، والشعیر بالشعیر ربًا إلا ھاء وھاء والتمر بالتمر ربًا إلا ھاء وھاء. (مسلم، رقم ۴۰۵۹)

    ’’سونے کے بدلے میں چاندی ادھار دوگے تو اُس میں سود آ جائے گا۔ [24] گندم کے بدلے میں دوسری قسم کی گندم ، [25] جو کے بدلے میں دوسری قسم کے جو اور کھجور کے بدلے میں دوسری قسم کی کھجور میں بھی یہی صورت ہو گی۔ ہاں، البتہ یہ معاملہ نقدا نقد ہو تو کوئی حرج نہیں۔‘‘

    اِن روایتوں کا صحیح مفہوم وہی ہے جو ہم نے اوپر اپنے ترجمہ میں واضح کر دیا ہے ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے جو کچھ فرمایا ، وہ یہی تھا ۔ روایتیں اگر اِسی صورت میں رہتیں تو لوگ اِن کا یہ مدعا سمجھنے میں غلطی نہ کرتے ، لیکن بعض دوسرے طریقوں میں راویوں کے سوء فہم نے اِن میں سے دوسری روایت سے ’ھاء وھاء‘ کا مفہوم پہلی روایت میں ،اور پہلی روایت سے ’الذھب بالذھب‘ کے الفاظ دوسری روایت میں ’الورق بالذھب‘ کی جگہ داخل کر کے اِنھیں اِس طرح خلط ملط کر دیا ہے کہ اِن کا حکم اب لوگوں کے لیے ایک لاینحل معما ہے ۔ ہماری فقہ میں’ربٰو الفضل‘ کا مسئلہ اِسی غتربود کے نتیجے میں پیدا ہوا ہے ،ورنہ حقیقت وہی ہے جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اِس ارشاد میں واضح کر دی ہے کہ ’إنما الربٰوا في النسیئۃ‘ [26] (سود صرف ادھار ہی کے معاملات میں ہوتاہے ) ۔ (میزان، سود)

You must be logged in to reply.
Login | Register